68

پاکستان کے میڈیکل کالجوں میں زیرتعلیم ایک درجن کشمیری طلاب

امرتسرپنجاب سے اپنے اپنے گھروں کوپہنچ گئے
کہاکورنٹین سینٹردی گئی بہترین سہولیات،پنجاب سرکار کاشکریہ
نیوزسروس

سری نگر:۶۱،اپریل:پاکستان کے مختلف میڈیکل کالجوں میں ایم بی بی ایس اوردیگرمیڈیکل کورسز کررہے کشمیری طلاب کے ایک گروپ اوردیگرکچھ افرادکوجمعرات کے روزامرتسرپنجاب سے واپس اپنے گھروں کی جانب جانے کی اجازت دی گئی ۔معلوم ہواکہ اس گروپ میں کل14افرادشامل ہیں ،جن میں پاکستانی کالجوں میں مختلف میڈیکل کورسزکرنے والے 9طلباءاور طالبات شامل ہیں جبکہ دیگرپانچ افرادبھی امرتسر میں درماندہ پڑے تھے ۔معلوم ہواکہ یہ سبھی14افرادگاڑیوں میں سوار ہوکرامرتسر سے جمعرات کی صبح لکھن پور پہنچے ،جہاں انہوں نے حکام کوامرتسرپنجاب میں کورنٹین سینٹروں کی جانب سے دی گئی سرٹیفکیٹ دکھائی ۔خیال رہے پاکستان سے آئے ان سبھی کشمیری طلباءاور طالبات اوردیگرکچھ افرادکوامرتسرپہنچنے پریہاں کورنٹین مرکز میں تقریباً2ہفتوں تک رکھاگیا۔تاہم کچھ روز قبل
قرنطینہ کی مدت مکمل کرنے کے باوجودیہ کشمیری طلبہ اپنے گھروں کی جانب سفرنہیں کرسکے کیونکہ لاک ڈاﺅن کے دوران کسی گاڑی کوچلنے کی اجازت نہیں دی جاتی تھی ۔امرتسرپنجاب میں کورنٹین سینٹرمیں دوہفتے گزارنے والے کشمیری طلاب کے گروپ میں شامل طالبات نے بتایاکہ ہم 18مارچ کوپاکستان سے پنجاب پہنچے تھے اوریہاں اُنھیں کورنٹین سینٹر میں رکھاگیا۔انہوں نے بتایاکہ کورنٹین سینٹرمیں ہمیں تسلی بخش سہولیات فراہم کی گئیں ۔طالبات کاکہناتھاکہ کورنٹین سینٹرمیں ان کی طبی جانچ کروائی گئی اوراسکی رپورٹ آنے کے بعدہمیں اپنے گھروں کولوٹنے کی اجازت ملی ۔انہوں نے کہاکہ امرتسرمیں پنجاب کے حکام نے ایک بس میں سوارکیا،اورہمیں لکھن پورپہنچایاگیا۔اوریہاں سے ہمیں جموں وکشمیرکی سرکار کی جانب سے ایس آرٹی سی بس میں سوارکیاگیا، اوراسوقت یعنی جمعرات کوسہ پہر5بجے ہم ناشری ٹنل کے نزدیک پہنچے ہیں ۔انہوں نے بتایاکہ ہمیں یقین دلایاگیاہے کہ سری نگرپہنچنے کے بعدہمیں اپنے گھروں تک بھی پہنچایاجائیگا۔معلوم ہواکہ پاکستان سے لوٹے کشمیری طلباءاورطالبات کاتعلق سری نگرکے علاوہ شمالی اورجنوبی کشمیرسے بھی ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں