403

سوپورمیں طبی خدمات وسہولیات کا فقدان باعث تشویش

BMOکی کرسی کئی مہینوں سے خالی
کوروناقہرکے پیش نظرفوری اقدامات ناگزیر:ارشادرسول کار
نیوز سروس

سری نگر:۶،اپریل:نیشنل کانفرنس کے لیڈر ارشادرسول کارنے سوپورمیں طبی خدمات وسہولیات کے فقدان پرتشویش ظاہر کرتے ہوئے کہاہے کہ بلاک میڈیکل افسرکی کرسی کاکئی مہینوں سے خالی رہنا حیران کن ہے ۔انہوںنے سب ڈسٹرکٹ اسپتال اوردیگرصحت مراکز میں ڈاکٹروںاورطبی ونیم طبی عملہ کی کمی کامعاملہ اُجاگر کرتے ہوئے سوالیہ اندازمیں کہاکہ افرادی قوت کی کمی اوردرکار طبی وتشخیصی سہولیات کے بغیر اسپتال کورونا قہر کاکیسے مقابلہ کرپائیں گے ۔ اپنے ایک بیان میں نیشنل کانفرنس کے لیڈر نے کہاکہ سوپور جیسے اہم نیم ضلع میں بلاک میڈیکل افسرکی کرسی کاکئی مہینوں سے خالی ہونا ایک تشویشناک امر ہے ،کیونکہ بی ایم اﺅکی عدم موجودگی سے سرکاری صحت مراکز کے کام کاج پرمنفی اثرات مرتب ہورہے ہیں جبکہ محکمہ صحت کے ملازمین بشمول ڈاکٹروں کودرپیش مشکلات اوراُن کے مطالبات کوبھی سننے والا کوئی نہیں ۔ارشاد رسول کارنے کہاکہ سب ڈسٹرکٹ اسپتال سمیت سوپور تحصیل کی حدودمیں قائم بیشترسرکاری صحت مراکز
میں لازمی سہولیات ،خدمات ،مشینری اورافرادی قوت کی کمی پائی جاتی ہے ۔انہوںنے بتایاکہ ایس ڈی ایچ سوپورمیں جہاں مختلف امراض کے ماہروسینئرڈاکٹروںکی کمی کامسئلہ درپیش ہے ،وہیں دیگرصحت مراکزمیں کہیں ڈاکٹروں ودیگرعملہ کی کمی پائی جاتی ہے توکسی صحت مرکز میں دیگرلازمی سہولیات کافقدان پایاجاتاہے ۔این سی لیڈر ارشادرسول کارنے مزیدکہاکہ کورونا وائرس کی رواں لہرنے سوپورکے کئی علاقوں کوبھی اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے اورحکام نے کم وبیش نصف درجن علاقوں کو‘مائیکرﺅ کنٹونمنٹ زون‘قرار دیاہے ۔انہوںنے سوالیہ اندازمیں کہاکہ افرادی قوت کی کمی اوردرکار تشخیصی وطبی سہولیات کے بغیر اسپتالوںمیں تعینات ڈاکٹر کورونا قہر کاکیسے مقابلہ کرپائیں گے ۔ارشادرسول کار نے انتظامیہ بالخصوص ڈائریکٹر ہیلتھ سروسزکشمیرسے مطالبہ کیاکہ نیم ضلع سوپورکی حدودمیں قائم سرکاری اسپتالوں اورصحت مراکز میں ڈاکٹروں،مشینری اوردیگر لازمی سہولیات کی کمی کودورکرنے کیساتھ ساتھ بلاتاخیر بلاک میڈیکل افسرکی تعیناتی عمل میں لائی جائے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں