172

قرآن کریم کی آیات ہٹانے سے متعلق عرضی خارج

ملعون وسیم رضوی پر50 ہزار روپے کا جرمانہ
یواین آئی

نئی دہلی :۲۱، اپریل :سپریم کورٹ نے پیر کو قرآن مجید کی 26 آیات کو ہٹانے کی درخواست خارج کردی جسٹس روہنگٹن فالی نریمن کی سربراہی والی بنچ نے اتر پردیش شیعہ وقف بورڈ کے سابق چیئرمین وسیم رضوی کی درخواست خارج کردی اور ان پر 50ہزار روپے جرمانہ عائد کیا۔ جسٹس نریمن نے کہاکہ یہ مکمل طور پرغیر سنجیدہ رٹ پٹیشن ہے۔ کیس کی سماعت کے دوران جسٹس نریمن نے پوچھا کہ کیا درخواست گزار اس درخواست کے بارے میں سنجیدہ ہے؟انہوں نے کہاکہ کیا آپ درخواست کی سماعت پر اصرار کررہے ہیں؟ کیا آپ واقعی سنجیدہ ہیں؟ ۔قر آن مجید کیخلاف ہرزہ سرائی کرنے والا وسیم رضوی کی طرف سے پیش سینئر ایڈووکیٹ آر کے رائے زادہ نے جواب دیا کہ وہ مدرسہ تعلیم کے ضوابط کےلئے اپنی درخواست محدود کررہے ہیں۔ اس کے بعد اس نے اپنے موکل کا موقف پیش کیا ، جس سے بنچ مطمئن نظر نہیں آیا اور اس نے پچاس ہزار روپے جرمانہ عائد کرتے
ہوئے خواست خارج کردی۔خیال رہے وسیم رضوی کی عرضی میں کہا گیاتھا کہ ان آیات میں انسانیت کے بنیادی اصولوں کو نظر انداز کیا گیاہے اور یہ مذہب کے نام پر نفرت ،قتل، خون خرابہ پھیلانے والا ہے، اس کے ساتھ ہی یہ آیات دہشت گردی کو فروغ دینے والا ہے۔وسیم رضوی کا یہ بھی کہنا تھا کہا کہ یہ قرآنی آیات مدارس میں بچوں کو پڑھائی جارہی ہیں ، جو ان کی بنیاد پرستی کا باعث ہیں ، درخواست میں کہا گیا ہے کہ قرآن کی ان 26 آیات میں تشدد کی تعلیم دی گئی ہے ، ایسی تربیت جو دہشت گردی کو فروغ دیتی ہے اسے روکا جانا چاہئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں