لداخ جانے والے موٹر سائیکل سوار سیاحوں کو

بانہال کے نزدیک روک کر واپس بھیج دیا گیا
یو پی آئی

سرینگر :۴، اگست //موٹر سائیکل پر سوار ایک درجن کے قریب سیلانی جنہیں سرینگر سے ہوتے ہوئے لداخ جانا تھا کو جواہر ٹنل کے نزدیک روک کر واپس بھیج دیا گیا ۔ موٹر سائیکلوں پر سوار سیاحوں نے بتایا کہ اب وہ ڈوڈہ کے راستے ہماچل جاکر وہاں سے لداخ جانے کی کوشش کرئینگے۔ مرکزی وزار ت داخلہ کی جانب سے مقامی سیلانیوں کو واد کشمیر نہ جانے کے سلسلے میں ایڈوائزری جاری کرنے کے بعداتوار کے روز بانہال کے نزدیک اُس وقت عجیب و غریب صورتحال دیکھنے کو ملی جب موٹر سائیکلوں پر سوار ایک درجن کے قریب سیاح سرینگر کی طرف جا رہے تھے کہ اس دوران جواہر ٹنل کے نزدیک اُنہیں سیکورٹی فورسز نے روکا اور واپس جانے کا فرمان جاری کیا۔ تن مائے نامی ایک موٹر سائیکل سوار سیاح نے بتایا کہ کئی ماہ قبل اُنہوں نے بائیکوں کے ذریعے لداخ جانے کا پروگرام بنایا تھا اور جونہی)
وہ بانہال کے نزدیک پہنچے تو اُنہیں یہ کہہ کر واپس بھیجا گیا کہ وادی میں حالات ٹھیک نہیں ہے لہذا وہ سرینگر کے راستے لداخ نہیں جاسکتے ہیں۔ مذکورہ سیاح کے مطابق وہ اب ڈوڈہ کے ذریعے ہماچل جائینگے اور وہاں سے لداخ جانے کی کوشش کرئینگے۔ قابلِ ذکر ہے کہ ریاستی حکومت کے ساتھ ساتھ مرکزی وزارت داخلہ نے بھی مقامی اور غیر ملکی سیاحوں کیلئے ایڈوائزری جاری کرتے ہوئے اُنہیں وادی کشمیر نہ جانے کی صلاح دی ہے کیونکہ ایڈوائزری میں کہا گیا ہے کہ عسکریت پسندوں کی جانب سے حملوں کے پیش نظر اس طرح کا فیصلہ لیا گیا ۔ ایڈوئزری جاری کرنے کے ساتھ ہی وادی کشمیر کی سیر و تفریح پر آنے والے سیاحوں کو جبری طورپر نکالا گیا ۔ پچھلے تین دنوں سے دس ہزار کے قریب ملکی اور غیر ملکی سیلانی واپس اپنے اپنے گھروں کی اور روانہ ہوئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *