78

کوروناوائرس :بروقت قرنطینہ،تیزٹیسٹنگ اورمعقول طبی نگہداشت بچاو کی صورتیں

جموں وکشمیرمیں مبتلاءہونے والے مریضوں کے شفایاب ہونے کی شرح 12فیصد
نیوزڈیسک

سری نگر:۶۱،اپریل:دنیابھرکے طبی ماہرین ابھی یہ اندازہ نہیں لگاپارہے ہیں کہ کووڈ19میں مبتلاءہونے والے افرادکے فوت یاشفایاب ہونے کی کیااوسط یاشرح ہے ۔کیونکہ بیشتر ممالک بشمول بھارت میں ٹیسٹنگ یاتشخیص کاعمل سست روی کاشکار ہے یاکہ ایسے ممالک نے عمداً ٹیسٹنگ کی رفتارنہیں بڑھائی ہے ۔تاہم جموں وکشمیرمیں ٹیسٹنگ کاعمل باقی ریاستوں اورعلاقوں کے مقابلے میں کافی بہتریاتیز رہاہے کیونکہ یہاں سری نگراورجموں میں کووڈ19کے مشتبہ مریضوں کے نمونوں کی جانچ کرنے کیلئے کم سے کم6جدیدلیبارٹریاں متحرک ہیں اورروزانہ ان لیبارٹریوں میں کم سے کم200نمونوں کی جانچ یاتشخیص کی جاتی ہے ،اورپھرتشخٰیصی رپورٹ جاری کئے جاتے ہیں ۔جموں وکشمیرمیں 15اپریل بروز بدھ کی شام تک کل300افرادکوکووڈ19میں مبتلاءپایاگیا،اوران سبھی مریضوں کوسری نگراورجموں سمیت مختلف اضلاع میں واقع مخصوص اسپتالوں میں زیرعلاج رکھاگیا،ابتک36ایسے مریض شفایاب ہوکراسپتالوں سے رُخصت ہوچکے ہیں ،اوراس طرح سے جموں وکشمیرمیں بدھ کی شام تک کووڈ19میں مبتلاءہونے والے افرادکے شفایاب ہونے کی شرح12فیصدرہی ہے جبکہ اسکے برعکس چونکہ ابتک صرف4ایسے مریضوں کی موت واقعہ ہوئی تواموات کی شرح 1.33رہی ہے ۔طبی ماہرین کامانناہے کہ اگرمشتبہ مریضوں کاجلد پتہ لگاکراُن کوکورنٹین مراکز یاقرنطینہ سینٹروں میں رکھاجاتاہے اور]پھرایسے افرادکے نمونے لیکر ٹیسٹنگ کی کارروائی جلد عمل میں لائی جاتی ہے توکووڈ19کوپھیلنے سے روکنے میں مددمل سکتی ہے ۔طبی ماہرین کہتے ہیں کہ کووڈ19کوپھیلنے سے روکنے اورمبتلاءہونے والے افرادکوبچانے کیلئے فوری نوعیت کے کچھ اقدامات روبہ عمل لاناضروری ہے ۔وہ کہتے ہیں کہ بروقت قرنطینہ ،فوری ٹیسٹنگ اورمعقول طبی خدمات سے مریضوں کی جان بچائی جاسکتی ہے جبکہ اس سارے عمل کے دوران مشتبہ یامبتلاءافرادکے حوصلے کوبلندرکھنابھی ضروری ہے تاکہ اُن کی اپنی قوت مدافعت یاجینے کی تمناءکم نہ ہو۔طبی ماہرین کہتے ہیں کہ جب کوئی شخص کووڈ19میں مبتلاءہوجاتاہے اوراُس کاٹیسٹ مثبت آتاہے تواُس کویہ یقین دلاناضروری ہے کہ تم ٹھیک ہوجاﺅگے ،اوربہت جلد اسپتال سے شفایاب ہوکراپنے گھرچلے جاﺅگے ۔اوراس ضمن میں کوروناوائرس مریضوں کاعلاج ومعالجہ کرنے والے ڈاکٹروں اوردیگرطبی ونیم طبی عملہ کااہم رول ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں