353

درانداز ی کے واقعات میں کمی واقعہ، سری نگرمیں عنقریب جنگجومخالف آپریشنز :ڈی جی پی

کشمیرمیں غیرملکی جنگجوﺅں کی اچھی تعداد
کے این ایس

سری نگر:۱۲، جون:ڈائریکٹر جنرل پولیس دلباغ سنگھ نے غیرملکی جنگجوﺅں کی اچھی تعدادکشمیرمیں موجودہونے کاانکشاف کرتے ہوئے سوموارکے روز یہ اعلان کیاکہ سری نگرمیں عنقریب جنگجومخالف آپریشنز شروع کئے جائیں گے ۔پولیس چیف نے رواں سال2غیر ملکی جنگجوﺅں کوہلاک کرنے کی بات کہتے ہوئے کہاکہ ناجنگ معاہدے پرعمل درآمد کے بعددرانداز ی کے واقعات میں کافی کمی آئی ہے ۔ گنڈبراٹھ سوپورمیں کامیاب جنگجومخالف آپریشن کے بعدپولیس کنٹرول روم سری نگرمیں آئی جی پی کشمیروجئے کمار اورفوج کی کلوفورس کے جی اﺅسی ایچ ایس ساہی کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈی جی پی دلباغ سنگھ نے کہاکہ رواں سال کشمیرمیں دوغیرملکی جنگجومارے گئے
تاہم ابھی بھی وادی میں غیرملکی جنگجوﺅں کی ایک اچھی تعدادموجودہے ،جن کے حوصلے پست ہیں ۔انہوںنے کہاکہ ابھی یہ دعویٰ کرنا غلط ہوگاکہ کشمیرکوغیرملکی جنگجوﺅں سے آزادکرایا گیاہے یاکہ کشمیرکوغیرملکی جنگجوﺅںسے نجات دلائی گئی ہے ۔ایک سوال کے جواب میں پولیس سربراہ دلباغ سنگھ کاکہناتھاکہ لائن آف کنٹرول پر ناجنگ معاہدے پرعمل درآمدسے دراندازی کے واقعات پرروک لگانے میں کافی مددملی ہے اورہم اس کاخیرمقد م کرتے ہیں ۔سری نگرشہرمیں جنگجوئیانہ سرگرمیوں کے بارے میں پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں ڈی جی پی نے نامہ نگاروںکوبتایاکہ سری نگرسے تعلق رکھنے والے کچھ ایک جنگجو سرگرم ہیں جوشہر کے مضافاتی علاقوں سے سرگرمیاں انجام دیتے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ ہم نے سری نگرکی حدودمیں ایک یادوجنگجوئیانہ واقعات دیکھے ہیں ،اورہم شہرمیں جنگجوﺅں کی سرگرمیوں پر صدفیصد لوگ نہیں لگاسکتے ہیں ۔ڈائریکٹر جنرل آف پولیس نے اس موقعہ پراعلان کیاکہ ہم عنقریب سری نگرشہرمیں بھی جنگجومخالف آپریشن شروع کریں گے ۔ایک اورسوال کاجواب دیتے ہوئے پولیس چیف کاکہناتھاکہ کپوارہ سیکٹر سے منشیات اورہتھیاروں کی اسمگلنگ ہورہی ہے تاہم حالیہ دنوں میں پولیس وفورسزنے منشیات وہتھیاروں کی بڑی مقدار ضبط کی ہے ۔سالانہ امرناتھ یاتراکے بارے میں بات کرتے ہوئے جموں وکشمیرپولیس کے سربراہ نے کہاکہ ہم یاتریوں کومکمل تحفظ دینے کیلئے تیار ہیں تاہم اسبات کافیصلہ حکومت کوشرائن بورڈکیساتھ مشاورت کرکے کرنا ہے کہ امسال یاترا عمل میں لائی جاتی ہے کہ نہیں ۔ڈی جی پی نے پریس کانفرنس کے دوران یہ واضح کیاکہ کشمیرمیں اب کوئی سیاسی لیڈرپولیس کے قید میں نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں