959

حکومت نے کیا یونیورسٹی پروفیسروں کےلئے ریٹائرمنٹ کی عمر میں3سال کا اضافہ

اب ہونگے62کے بجائے65سال کی عمر میں سبکدوش
کیسو ں کاجائزہ لینے کیلئے چیف سیکرٹری کی زیر سربراہی ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی تشکیل
نیوزسروس

سری نگر:۴،جولائی:ایک اہم پیش رفت میں، حکومت جموں و کشمیر نے اپنے محکمہ اعلیٰ تعلیم کے ذریعے یونیورسٹی کے پروفیسروں کےلئے ریٹائرمنٹ کی عمر میں اضافہ کرنے کا ایک سرکاری حکم نامہ جاری کیا ہے۔ لیفٹیننٹ گورنرکی صدارت میں انتظامی کونسل کے ذریعے لئے گئے فیصلے کی رﺅ سے پروفیسروں کےلئے ریٹائرمنٹ کی عمر کو 62 سے بڑھا کر65 سال کر دیتا ہے۔ سرکاری حکم نامے میں کہاگیاہے کہ حکومت جموں وکشمیر کے اس فیصلے کا مقصد یونیورسٹی کے پروفیسروںکے پاس موجود انمول مہارت اور تجربے کو تسلیم کرنا ہے اور انہیں خطے کے تعلیمی منظرنامے میں حصہ ڈالنے کےلئے طویل مدت فراہم کرنا ہے۔ ریٹائرمنٹ کی عمر میں توسیع کر کے، حکومت کو اُمید ہے کہ وہ اہل اور سرشار فیکلٹی ممبران کو برقرار رکھے گی جو یونیورسٹیوں کے تدریسی، تحقیق اور انتظامی پہلوو¿ں کو مزید تقویت دیتے رہیں گے۔ایک منصفانہ اور جامع جانچ کے عمل کو یقینی بنانے کےلئے،گورنمنٹ آرڈر183-JK(HE) آف 2023 بتاریخ3جولائی 2023، چیف سکریٹری جموں و کشمیر کی صدارت میں ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ جس میں ہر پروفیسر کے کیس کا انفرادی طور پر جائزہ لینا اور ہر کیس کی بنیاد پر عمر میں اضافے سے متعلق فیصلے کرنا شامل ہے۔محکمہ ہائر ایجوکیشن کی انڈر سکریٹری روبیہ افروز انقلابی نے کہا کہ حکومت نے اس سلسلے میں ہائر ایجوکیشن کو یہ بتانے کی ہدایت کی ہے کہ جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر کی صدارت میں انتظامی کونسل نے یونیورسٹی کے پروفیسروں کی ریٹائرمنٹ کی عمر62 سے بڑھا کر65 سال کر دی ہے۔سرکاری نوٹیفکیشن میں کہاگیاہے کہ جموں و کشمیر کے چیف سکریٹری کی سربراہی میں تشکیل دی گئی ایک کمیٹی ہر معاملے کی الگ الگ جانچ کرے گی اور کیس کی بنیاد پر عمر میں اضافے کے بارے میں فیصلہ کرے گی۔محکمہ ہائر ایجوکیشن نے کہا کہ یونیورسٹی کے پروفیسروں کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا اور 62 سال کی عمر تک پہنچنے سے پہلے حکومت کی طرف سے مقرر کردہ پیرامیٹر کی بنیاد پر جائزہ لیا جائے گا۔سرکاری نوٹیفکیشن میں مزید کہاگیاہے کہ حکام پروفیسر کی مجموعی کارکردگی، یونیورسٹی میں تدریسی اور تحقیقی کاموں کے لیے موزوں جسمانی اور ذہنی صحت اور جے کے حکومت کے سول سروس ریگولیشنز کے مطابق عمومی طرز عمل کے معیارات کی جانچ کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں